پاکستان کے عالمی شہرت یافتہ ادباء کی محمدزبیرمظہرپنوار کو داد و تحسین۔۔

 

پاکستان کے عالمی شہرت یافتہ ادباء کی محمدزبیرمظہرپنوار کو داد و تحسین۔۔

پاکستان کے عالمی شہرت یافتہ ادباء محمود ظفر اقبال ہاشمی ۔ نعیم بیگ ۔ سیدہ رضوانہ علی ۔ محمد شاہد جمیل ۔ محمد ایوب صابر ۔ محمدحمید قیصر نے محمدزبیرمظہرپنوار کے صحافتی میدان میں آنے کے فیصلے کا خیر مقدم کرتے ہوئے مختلف انداز میں داد و تحسین ۔۔
ذرائع کے مطابق سفید گلاب ۔ اندھیرے میں جگنو ۔ اور حال ہی میں منظر عام پہ آنیوالے ناول میں جناح کا وارث ہوں کے خالق محمود ظفر اقبال ہاشمی نے محمدزبیرمظہرپنوار کو تحصیل خیرپور اور تحصیل حاصلپور کی صحافت کے لیے موزوں ترین شخص قرار دیا ۔۔ محمود ظفر اقبال ہاشمی سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے ناصرف زبیرپنوار کی حمایت بلکہ ڈیلی بوریوالا کو خصوصی پیغام دیا کہ زبیرپنوار کا ادب کے ساتھ صحافتی میدان میں اترنے کی خبر انتہائی خوشگوار کن ہے ۔۔ یقینا میری طرح مقامی صحافی بھی خوش ہونگے ۔ کہ ایک قابل دیانتدار نڈر شخصیت کی صحافتی میدان میں انٹری ہوئی ہے ۔۔ یقینا زبیرپنوار کا صحافت میں آنا مقامی شہریوں کے لیے بھی نیک شگن ہے ۔۔ امید ہے پنوار صاحب مقامی مسائل کو اپنی فہم و فراصت سے بہتر طریقہ سے اجاگر کرنے کے ساتھ حل کروانے کی اہلیت بھی رکھتے ۔۔ بطور ادیب زبیرپنوار ادب میں اپنی قابلیت منوا چکے ان لکھی گئی کہانیاں اور فکشن عالمی سطح پہ پزیرائی حاصل کر چکیں ۔۔ مزیذ برادرم محمد زبیر مظہر پنوار صحافت کے پُرخار میدان میں قدم رکھ رہے ہیں۔ چونکہ حق گوئی ، صاف گوئی اور تحقیق پسندی ہی صحافت کی اصل زبان ہے سو مجھے کامل یقین ہے کہ برادرم مظہر پنوار اس شعبے کے لئے موزوں ترین ثابت ہوں گے۔ مٓیں انہیں دل کی گہرائیوں سے مبارکباد پیش کرتا ہوں اور جتنا انہیں جانتا ہوں اس کے بنا پر پوری ذمہ داری کے ساتھ کہہ سکتا ہوں کہ وہ بہت جلد اپنی قدر و منزلت خود منوا لیں گے ۔۔
لاہور سے تعلق رکھنے والے معروف عالمی ادیب مبصر نقاد اور فلم نگار نعیم بیگ صاحب نے اپنے پیغام میں کہا کہ محمد زبیر پنوار کا سفر ادب سے صحافت کی طرف ہے ۔۔۔۔عام۔طور پر یہ سفر صحافت سے ادب کی طرف ہوتا ہے جو قدرے آسان ہوتا ہے ۔۔۔۔لیکن انہوں نے مشکل راستہ چنا ہے ۔۔۔۔ ادب کی سوجھ بوجھ رکھنے والوں کے لئے اصولوں پر خبروں کی کسوٹی کا معیار قائم رکھنا ہمارے میڈیا میں کار دارد ہی ہے ۔۔۔تاہم میں اس سفر میں پنوار کے لئے حسن ظن بھی رکھتا ہوں اور نیک خواہشات بھی ۔۔۔۔انکی کامیابی ان کے قلم اور فکر میں ہو گی جس کا یہ یقینا خیال رکھیں گے ۔۔۔۔
معروف ادیبہ نقاد اور افسانہ نگار سیدہ رضوانہ علی نے کہا زبیر میاں ! ڈھیروں دعائیں اور محبتیں حاضر ۔ تم کامیاب رھو اور خلوص کے ساتھ معاشرے کے لئے مفید ثابت ھو سکو اور ہمیشہ عزت پاؤ ۔۔
معروف ادیب نقاد شاعر افسانہ نگار محمد ایوب صابر نے اپنے پیغام میں کہا ۔ کہ محمدزبیرمظہرپنوار ہمیشہ ادب کی خدمت میں پیش پیش رہتے ہیں ..ادب انسان کے اندر آگہی اور خدمت کا جذبہ پیدا کرتا هے اور آپ ان جذبوں سے خوب آشنا ہیں.. صحافت میں دیانتداری سے بہت سی برائیوں کا تدارک کیا جا سکتا ہے… لہذا زبیرپنوار جیسی فہم و فراست اور حسن ظن رکھنے والی شخصیت انسانیت کا درد سمجھنے کے ساتھ درد دل اور مسائل سمجھتی بھی ہے ۔۔ میں دعا گو ہوں کہ اللہ پاک پنوار صاحب کی توانائیاں بحال رکهے…آمین
معروف افسانہ نگار شاعر ادیب مبصر فکشن نگار شاہد جمیل احمد صاحب نے اپنے پیغام میں کہا ۔ کہ میں محمدزبیرمظہرپنوار کے صحافتی میدان میں آنے کے فیصلے کی داد دیتا ہوں ۔۔ زبیرپنوار کی ادبی کہانیوں کو دیکھا جائے تو نت نئے معاشی معاشرتی اور اخلاقی مسائل کی داستانیں سنا رہی ہوتی ہیں ۔ ایسے میں صحافت میں آنا اور عوام کے مسائل اجاگر کرنا اس سے بڑھ کر ادب اور معاشرے کی خدمت کیا ہو گی ۔ اللہ پاک سے آپکی کامیابی و کامرانی کی دعائیں ۔۔
معروف ادیب مبصر نقاد سینئر ریڈیو براڈ کاسٹر حمید قیصر صاحب نے کہا محمد زبیر مظہر پنوار اردو ادب و صحافت میں امرت دھارا بن کر ابھرے ہیں. انہوں نے نہایت قلیل وقت میں اردو شعروادب میں اپنا نام پیدا کیا ھے. ہر دو اصناف ادب اپنی اپنی جگہ مشکل اور بھاری پتھر ہیں مگر جناب محمد زبیر مظہر پنوار کو دونوں پر مکمل کمانڈ حاصل ھے.ان کا قلم بڑی روانی اور خیال آفرینی سے گوہر افشانی کرتا ھے.ان کو میں نے امرت دھارا اس لئے قرار دیا کہ وہ ایک ورسٹائل قلمکار ہونے کےساتھ ساتھ انتظامی صلاحیتوں سے بھی مالامال ہیں. انکا چرچہ اور شہرت پاکستان کے تمام علمی و ادبی حلقوں میں پائی جاتی ہے ۔۔ پنوار صاحب نے گراؤنڈ لیول نے اور سوشل میڈیا پر علمی وادبی فورم نہایت ناصرف کامیابی سے چلا کر دکھائے بلکہ اپنی کامیابیوں کا لوہا منوانے میں کامیاب رے ۔۔ بطور فکشن نگار نوجوان طبقہ میں پنوار نمائندہ تخلیقکار بن کر ادب کے آسمان پر چمکے ۔ بطور میگزین مدیر پہلے دبستان ادب پھر آن لائن جریدہ جرس اور اب ندائے گل کے چیف کواڈبنیٹر ۔۔ شاید ہی کوئی میگزین یا اخبار ہو گا جس میں پنوار کی تخلیقات شامل نہ رہی ہوں ۔۔ جناب محمد زبیر مظہر پنوار کی ان تمام علمی و ادبی صلاحیتوں کے نہ صرف فیس بک کے احباب بلکہ علم وادب کے ساتھی بھی قائل ہیں.وہ ایک کہنہ مشق اور نڈر ادیب ہیں اور امید کرتا ہوں آپ بطور صحافی بھی لاجواب ثابت ہونگے ۔انہیں قلم سے تلوار کا سا کام لینا خوب آتا ھے.ان کا ابتک کا عملی وادبی کام میرے تمام دعووں کا ٹھوس ثبوت ہیں.اس تناظرمیں، میں انکے روشن مستقبل کیلئے دعاگو ہوں!

More from my site

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *