افسانے

کھوکھلا وجود

  تحریر : معصومہ ارشاد سولنگی “کھوکھلا وجود ” “تم نے آخر ہمارے لیے کیا ہی کیا ہے؟” یہ ایک جملہ اب تک اس کی سماعتوں میں گونج رہا تھا۔ اسے کچھ سمجھ نہیں آرہا تھا کہ وہ ایک سوال تھا یا کوئی ہتھوڑا جو اس کے دل و دماغ پر برس رہا تھا۔ وہ

کفن چور

سید میثاق علی جعفری / اسلام آباد …….کفن چور ……. اسے قبرستان میں کام کرتے چالیس سال ہو گئے تھے. اس شہر ِ خموشاں کی آبادی ملک کی آبادی کے ساتھ ساتھ دن بہ دن بڑ رہی تھی اسے مُردے ورثا کے ناموں کے حوالے سے یاد تھے… قبر کے سرکاری نرخ بڑھے مردےکے3500 روپے

قصہ بابا جی کا

عنوان : قصہ بابا جی کا تحریر : تاج رحیم یہ نہ سمجھ بیٹھنا کہ میں اسی سال کا ہوں تو بوڑھا ہو گیا ۔ آپ میدانی علاقے کے رہنے والے لوگ اس عمر میں بوڑھے ہو جاتے ہیں ۔ ہم پہاڑوں کے باسی تو اس عمر میں پہنچ کر جوانی سے لطف اندوز ہوتے

افسانے محبت کے

افسانے محبت کے ۔۔۔۔۔۔۔۔ افسانہ نگار: معظم شاہ اٹک ۔ پنجاب ۔ پاکستان افسانہ: تیرے نال جدوں ، یاریاں لایاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ اچھی بھلی “مردہ زندگی” گزار رہا تھا کہ اسے عشق نے آن گھیرا ۔عشق بھی ایسا جو سر چڑھ جائے تو جان لے کر ہی ٹلتا ہے ۔ میں تو محبت کی قائل

بد چلن

عنوان : بدچلن تحریر : رئیسہ ریج ربیعہ سہیلیوں کے جھرمٹ میں بیٹھی ہوئی بہت خوش دکھائی دے رہی تھی۔پارلر والی لڑکی اس کے ہاتھوں میں مہندی رچا رہی تھی۔ربیعہ کو سہیلیوں میں بیٹھا دیکھ کر لگ رہا تھا جیسے چاند ستاروں کے جھرمٹ میں بیٹھا مسکرا رہا ہے۔سہیلیوں کی چہکار ،ڈھولک کی تھاپ اور

کانوں کی آنکھیں

  تحریر : قدسیہ نديم لالی ::::::::::::::::::::::::::::: کانوں کی آنکھيں ::::::::::::::::::::::::::::::: ميں فارمیسی پر بچوں کے ڈائپر کے پیکٹ پر قیمت دیکھ رہا تھا کہ اچانک ایک زنانہ مضبوط ہاتھ میرے سامنے آيا اور شیلف سے کچھ اُٹھا کر لے گیا ، ميں ابھی گردن موڑ کر دیکھنے کی کوشش ہی کر رہا تھا اُسی

ایک تھپٹر

مرزا ادیب سے معذرت کے ساتھ بزم مزاح۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تحریر۔۔۔۔عائشہ تنویر ابا جی مارنے کے بہت شوقین تھے . ”باپ کی طرف پاؤں کر کے بیٹھتا ہے ” ایک تھپڑ . ”کھانے میں اتنی دیر لگا دی ” پھر ایک تھپڑ ۔ سارے دن میں کتنے ھی تھپڑ کھانے کے موقع آتے رہتے . اور تو

سندراں مائی ڈئیر

  افسانہ نگار: شاہد جمیل احمد ، گوجرانوالہ ، پاکستان۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “سندراں مائی ڈیئر” تمہارے رنگ محل سے تا حد نظر پھیلے جھونے اور چِینے کے ہرے کھیتوں کے بیچ کہیں کہیں سوانک کے پودوں پر لگے ہلکے سبز چکنے بیجوں کی قسم مجھے تم سے محبت ہے ۔ کیا میں نہیں دیکھتا تھا کہ

کوٹ

عنوان ۔۔۔۔۔۔۔۔”کوٹ” تحریر ۔۔۔۔۔۔ نصرت اعوان ۔ کراچی شام کے ساۓ ڈھلنے لگے تھے سردی بڑھ گئی تھی،سڑک ویران پڑی تھی… اس سڑک پر ایک خوبصورت لڑکی شاید کسی کے انتظار میں کھڑی سردی سے ٹھٹھر رہی تھی.. ویرانہ دهاڑ رہا تھا… خاموشی اس قدر گہری تھی کہ خوف کا سما تها .. پرندے بهی

ایک اور انتظار

انہماک کے رومانی مائکروفکشن تحریر : اطہر کلیم انصاری۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اک اور انتظار۔۔۔۔۔۔۔ “پھر وہی انتظار ۔۔۔وہ بڑ بڑایا” کبھی گیٹ کے باہر تو کبھی…. کلاس روم میں..تو کبھی چلتے ہو ئے کسی راہ کے کنارے مگر اس کی کیفیت کچھ اور ہی تھی …. دسمبر کی وہ دسویں صبح تھی۔۔۔ بہت ہی سرد اور خشک۔

مٹھی بھر کھجوریں

مُٹھی بھر کھجوریں تحریر: طیب صالح (سوڈان) مترجم: احمد صغیر صدیقی میں اس وقت یقیناً بہت چھوٹا رہا ہوں گا۔ مجھے یہ بات تو بالکل یاد نہیں کہ اس وقت میری عمر کیا تھی، تاہم یہ بات مجھے اچھی طرح یاد ہے کہ میں جب اپنے دادا کے ساتھ باہر نکلتا تھا تو مجھے ملنے

محبت

انہماک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کے افسانے تحریر : ناہیدطاہر۔۔۔۔۔ریاض ۔۔۔۔سعودی عرب۔ عنوان ۔۔۔۔۔۔ محبت ۔۔۔۔۔۔۔ شادی کی پہلی رات سلطان گھونگھٹ اٹھاکر اپنی محبت کا یقین دلاتا ہوا زمین و آسمان ایک کرنے لگا۔۔۔۔۔۔ “تم میری متاعِ جاں ہو۔۔۔۔۔۔!!!” “میری زندگی کی ہر خوشی تم سے جڑی ہے ۔۔۔۔!!!” میری سانسیں تم سے وابستہ ہیں ۔۔۔!!! تم

نصرت اعوان کے قلم سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عورت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

“عورت” “ہیلو…کیسی ہو فرحت …کہاں غائب ہو ؟ کئی دنوں سے تمہیں فون لگا رہی ہوں لیکن نہ جانے کیا مسلہ ہے ..تمہارا نمبر کیا خراب تھا. مل ہی نہیں رہا تھا. شکر ہے آج مل گیا.. ” “مت پوچهو ….کیا بتاوں ….کیا کہوں !!؟؟ جب کسی درخت کی جڑیں کھوکھلی ہونا شروع ہو جائیں