عہدہ سے فارغ ہونےو الے ڈپٹی ایجوکیشن افسران نے اساتذہ سے زبردستی اپنے حق میں بیان لینا شروع کر دئیے

بورے والا(چوہدری اصغر علی جاوید سے)کرپشن کے الزام میں عہدہ سے فارغ ہونےو الے ڈپٹی ایجوکیشن افسران نے اساتذہ سے زبردستی اپنے حق میں بیان لینا شروع کر دئیے،ایک سکول ہیڈ ماسٹر کو رشوت کی رقم واپس کر دی،دوسرے سکول کے ہیڈ ماسٹر نے بھی ڈپٹی ایجوکشن آفیسر پر رشوت کا الزام عائد کر دیا،ڈی سی کی جانب سے فارغ کیے گئے افسران کے خلاف محکمہ تعلیم پنجاب نے تاحال کوئی کاروائی نہیں کی،دونوں افسران عہدوں پر دوبارہ بحالی کے لیے پرامید،اگر کرپٹ افسران دوبارہ تعینات کیے گئے تو اساتذہ سڑکوں پر نکل آئیں گے،پنجاب ٹیچرز یونین،تفصیلات کے مطابق عید سے قبل نئے بھرتی ہونے والے ایجوکیٹرز سے اسناد کی تصدیق کے نام پر رشوت لینے کے الزام میں ڈی سی وہاڑی اور سی او ایجوکیشن وہاڑی نے ڈپٹی ایجوکیشن آفیسر زنانہ ام رباب اور ڈپٹی ایجوکیشن آفیسر(مردانہ)رانا عبدالرحمان کو اُنکے عہدوں سے فارغ کرکے رپورٹ محکمہ تعلیم پنجاب کو ارسال کر دی تھی جس کے بعد دونوں افسران کے خلاف متعدد سکولوں کے سربراہان کی جانب سے زبردستی رشوت لینے کے الزامات سامنے آنا شروع ہو گئے تھے اور اسی سلسلہ میں گورنمنٹ پرائمری سکول کے ہیڈ ماسٹر محمد عباس کی درخواست پر ڈپٹی مردانہ رانا عبدالرحمن کے خلاف رشوت کے الزام میں انکوائری جاری تھی جس میں رشوت ثابت ہونے پر رانا عبدالرحمان نے مذکورہ ہیڈ ماسٹر کو اُسکے سکول جا کر رشوت کی رقم واپس کر دی جس کا تحریری ثبوت بھی محکمہ نے حاصل کر لیا جبکہ اسی دوران گورنمنٹ پرائمری سکول 403ای بی کے ہیڈ ماسٹر مشتاق احمد نے بھی محکمہ کے افسران کو دئیے گئے حلفیہ بیان میں الزام عائد کیا کہ رانا عبدالرحمان نے اُن سے بھی دباﺅ ڈال کر ہزاروں روپے رشوت لی ہے معلوم ہوا ہے کہ دونوں افسران نے اپنے خلاف رشوت کے مذید ثبوت سامنے آنے سے روکنے کے لیے مختلف سکولوں کے سربراہان اور اسسٹنٹ ایجوکیشن افسران سے اپنے حق میں حلفیہ بیان لینے کے لیے داﺅ ڈالنا شروع کر دیاہے اور اپنے عہدوں پر دوبارہ بحالی کے لیے بااثر سیاسی شخصیات کی جانب سے محکمہ تعلیم پنجاب کے افسران پر دباﺅ بڑھانا شروع کر دیا ہے اور انہوں نے متعدد اساتذہ کو یہ دھمکیاں بھی دی ہیں کہ وہ بہت جلد اپنے عہدوں پر بحال ہو جائیں گے اور پھر شکایات کرنے والوں کے خلاف محکمانہ کاروائی کریں گے اس تمام تر صورتحال پر پنجاب ٹیچرز یونین میں شدید غم و غصہ پایا جا رہا ہے اور مرکزی چیئرمین پنجاب ٹیچرز یونین رائے غلام مصطفےٰ ریاض نے سیکرٹری تعلیم کو انتباہ کیا ہے کہ اگر دونوں کرپٹ افسران کو ضلع بدر نہ کیا گیا اور انہیں اُنکے عہدوں پر دوبارہ بحال کیا گیا تو اساتذہ سڑکوں پر نکلے پر مجبور ہو جائیں گے اُدھر محکمہ تعلیم کے حکام نے ڈی سی وہاڑی کی رپورٹ پر تاحال دونوں افسران کے خلاف مذید کوئی کاروائی نہیں کی۔

About Author

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے